Faiz ki Yaad mein

فیض کی یاد میں

غزل

”رات یوں دل میں تری کھوئی ہوئی یاد آئی”
جیسے بھولے ہوئے نغموں کو نئی داد آئی

بے وجہ ہولے سے اس دل کو قرار آنے لگا
جیسے پھر کُنجِ قفس میں سحر ِآزاد آئی

جانِ شوریدہ میں پھر جوشِ جنوں اُٹھنے لگا
لمحہ لمحہ جو وہی رسم ِ حَکم یاد آئی

دل کی آواز جو خاموش تھی بیدار ہوئی
نقش ِ فریادی کے ہر نقش سے فریاد آئی

کلمہء صدق و صفا پھر سے گنہگار ہوا
اہل ِ اِیوان ِ ہوس میں شب ِ بیداد آئی

اب نہ وہ دار نہ زنجیر نہ وہ طوق و رسن
چلتے پھرتے سر  ِمقتل کی یہ ایجاد آئی

کیوں ہوے قتل نہ مقتول نہ قاتل کو خبر
بے وجہ دہر میں یوں صَرصَر ِبرباد آئی

فیض پھر اہل ِ وطن کو ہے ضرورت تیری
ہائے صد حیف ترے بعد تری یاد آئی

دور ِ آمر ہو یا جمہوری مگر دیکھ اشرف
فکرِ دوراں میں غمِ فیض کی روداد آئی
—————————————————–

غزل

جو قدم قدم مرے ساتھ ہو اُسی راہبر کی تلاش ہے
جسے طے کریں تو پتا چلے اُسی راہگزر کی تلاش ہے

ہے مرا جنون مسافری شب و روز بحر شناوری
تہ ِ بحر قطرہ گُہر بنے اُسی جوہرور کی تلاش ہے

میرا کوزہ کوزہء خاکناب ہے ناآشنا تبِ تازوتاب
دے سرشتِ گوہرِ جامِ جم اُسی کوزہ گر کی تلاش ہے

نہ سمجھ کہ اس میں وہ دم نہیں میرے دشت زار میں نم نہیں
اسے قطرہ قطرہ جو تر کرے اُسی چشمِ تر کی تلاش ہے

نگہِ جستجو ہے جہاں پڑے دلِ مضطرب میں تڑپ اُٹھے
وہ جو ہے حقیقتِ منتظر اُسی منتظر کی تلاش ہے

 فضیلتِ انبیا ، یہ  تڑپ  طریقتِ اولیا  یہ طلب
میں بشر ہوں اشرفِ ناتواں مجھے خضرور کی تلاش ہے

—————————————————————————

حوا اور بیٹی

فضائے خُلد مسجود ِ ملائک   لطف ِ شاہانہ
سراپا  جلوہ ہی جلوہ دلِ آدم میں  ویرانہ

یوں تنہائی کے عالم میں اداسی حد سے جب گزری
خدائی  جوش  میں آئی  بھرا آدم  کا  پیمانہ

سجی آغوش ِ آدم  پیکر ِ حُسن و محبت  سے
ہوئی  جلوہ نما حوا کیا آدم کو دیوانہ

جو دیکھا شجر ِ ممنوعہ کہا حوا نے آدم سے
ہم اہل ِدل کو بیخبری کی حالت ہے سفیہانہ

یہاں جلووں میں گم ہو کرخودی سے بیخبرہیں ہم
جسے جنت سمجھتے ہیں یہ ہے سرمست میخانہ

بنائیں ہم  جہاں اپنا بسائیں اک  مکاں اپنا
جہاں  پہ زندگی اپنی ہو اور اپنا ہو افسانہ

یہ موج ِآرزو شدت سے سینے میں جو گرمائی
نکل کر باغ ِ جنت سے کیا صحرا میں دارانہ

کچھ ایسی ریت حوا نے بنا دی روز ِ اول سے
کہ راس آتا نہیں دختر کو سُسرالی محل خانہ

چلیں اس محل کو چھوڑیں بسا ئیں گھر الگ اپنا
تری اماں کا گھر ہے یہ ترے بابا کا کاشانہ 

مری اماں کے گھر کے پاس ہے چھوٹا سا گھر خالی
اگرچہ ایک کمرہ ہے مگر  ماحول  رومانہ 

بہت رومانس ہوگا جب سبھی کچھ ہو گا کمرے میں
اِدھر بستر اُدھر چولہا تو وہ کونہ غسلخانہ

نہ ہو گی ساس کی دیوار و حُکمِ سُسر کا خدشہ
اسی چھوٹے سے گھر میں اپنے ہوںگے ٹھاٹھ شاہانہ

اُٹھا کر بوریا بستر وہ نکلے محل خانے سے
وہی اک دختر ِ حوا ،  وہی اک پسر ِدیوانہ

دُہائی ماں نے دی وہ لے گئی میرا جگر گوشہ
کہا اشرف نے ری پلے دیکھ اپنے کل کا افسانہ
                                       (اشرف)

HAPPY NEW YEAR 2012
 
a’ey murgh-e-sahr dehr mein ek shor macha hai
yeh din hai nayaa, subeh nayaii, saal nayaa hai
 
aur sham ke dhaltay he charaghaan ka smaan hai
jaisay keh na’aay saal mein husn-e-rukh-e-janaan hai
 
andaaz tery bang-e-sahr ka to wohii hai
roshan subeh-e-sadiq ka sitra bhi wohii hai
 
suraj bhi whoii chand sitaray bhi whoii hain
yeh dhoop yeh saa’ay yeh nzaray bhi wohii hain
 
gardoon ke shab-o-roze ishaaray bhi wohii hain
zaalim bhi wohii zulm ke maarey bhi wohii hain
 
her lamhay se waabasta wohii beem-o-raja hai
hairaan hoon na’aay saal mein kaya hai jo naya hai
 
gardan ko uthha kar de azaan murgh-e-sahr nay
izhaar kiyaa lutf-e-khudi us ki nazar nay
 
ek husn-e-sahr dekh meri  baang-e-sahr mein
her roze hai umeed naii es kay sehr mein
 
Ashraf mein batata hoon na’aay saal mein kaya hai
umeed na’ii hai jo na’aay saal ka muzzdah hai
 
Mirza Ashraf

نیا سال

اے مرغِ سحر دہر میں اک شور مچا ہے
یہ صبح نئی دن ہے نیا سال نیا ہے
a’ey murgh-e-sahr dehr mein ek shor macha hai
yeh din hai nayaa, subeh nayaii, saal nayaa hai
اور شام کے ڈھلتے ہی چراغاں کا سماں ہے
جیسے کہ نئے سال میں حسنِ رخِ جاناں ہے 
aur sham ke dhaltay he charaghaan ka smaan hai
jaisay keh na’aay saal mein husn-e-rukh-e-janaan hai
انداز تیری بانگِ سحر کا تو وہی ہے

روشن صبح صادق کا ستارہ بھی وہی ہے
andaaz tery bang-e-sahr ka to wohii hai
roshan subeh-e-sadiq ka sitra bhi wohii hai
سورج بھی وہی چاند ستار ے بھی وہی ہیں
یہ دھوپ یہ سائے یہ نظارے بھی وہی ہیں
suraj bhi whoii chand sitaray bhi whoii hain
yeh dhoop yeh saa’ay yeh nzaray bhi wohii hain
گردوں کے شب و روز اشارے بھی وہی ہیں
ظالم بھی وہی ظلم کے مارے بھی وہی ہیں
gardoon ke shab-o-roze ishaaray bhi wohii hain
zaalim bhi wohii zulm ke maarey bhi wohii hain
ہر لمحے سے وابستہ وہی بیم و رجا ہے
حیراں ہوں نئے سال میں کیا ہے جو نیا ہے
her lamhay se waabasta wohii beem-o-raja hai
hairaan hoon na’aay saal mein kaya hai jo naya hai
گردن جو اُٹھا کر دی اذاں مرغِ سحر نے
اظہار کیا لطفِ خودی اس کی نظر نے
gardan ko uthha kar de azaan murgh-e-sahr nay
izhaar kiyaa lutf-e-khudi us ki nazar nay
اک حسن ِسحر دیکھ مری بانگِ سحَر میں
ہر روز ہے اُمید نئی اس کے سحِر میں
ek husn-e-sahr dekh meri  baang-e-sahr mein
her roze hai umeed naii es kay sehr mein
اشرف میں بتاتا ہوں نئے سال میں کیا ہے
اُمید نئی ہے جو نئے سال کا مژدہ ہے
Ashraf mein batata hoon na’aay saal mein kaya hai
umeed na’ii hai jo na’aay saal ka muzzdah hai
اشرف

Advertisements

Leave a comment

Filed under Poetry

Hello world!

Welcome to WordPress.com. After you read this, you should delete and write your own post, with a new title above. Or hit Add New on the left (of the admin dashboard) to start a fresh post.

Here are some suggestions for your first post.

  1. You can find new ideas for what to blog about by reading the Daily Post.
  2. Add PressThis to your browser. It creates a new blog post for you about any interesting  page you read on the web.
  3. Make some changes to this page, and then hit preview on the right. You can always preview any post or edit it before you share it to the world.

1 Comment

Filed under Philosophy